84

ساہیوال واقعے کے بعد ایک اور واقعہ کشمور لواحقین کا کہنا ہے کہ شہر کے اندر سے دن دیہاڑی 1 بجے کشمور اور بخشاپور کے پولیس والے لعل بخش مزاری کو کشمور کے موبائل مارکیٹ سے اٹھا کے لے گئے

Spread the love

ساہیوال واقعے کے بعد ایک اور واقعہ کشمور
لواحقین کا کہنا ہے کہ
شہر کے اندر سے دن دیہاڑی 1 بجے کشمور اور بخشاپور کے پولیس والے لعل بخش مزاری کو کشمور کے موبائل مارکیٹ سے اٹھا کے لے گئے اور کچے میں لے جا کر اس کے پاؤں میں گولی مار دیا اور ایس پی صاحب نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے یہ کہا کہ یہ ڈاکو ہے ہم نے اس کو کچے سے پکڑا ہے ہمارے ملک میں یہ کیا ہو رہا ہے عوام کے محافظ ہی عوام کو مار رہے ہیں یہ کونسا انصاف ہے کون انصاف کرے گا کون اس کو انصاف دے گا پہلے ساہیوال میں بچوں کے ماں باپ کو مار دیا گیا او آج کشمور کے شھر میں یہ واقعہ ہوا ہم آئی جی سندھ اور چیف جسٹس اور عمران خان اور آصف علی زرداری سب سے مطالبہ کرتے ہیں کہ لعل بخش مزاری کے ساتھ انصاف کیا جائے اور اس کو گولی مارنے والے پولیس والوں کو سخت سے سخت سزا دی جائے عمران خان صاحب یہ کونسا نیا پاکستان ہے جن کو عوام کی حفاظت کرنی چاہیے وہیں عوام کو مار رہے ہیں جہاں لوگ انصاف مانگنے جاتے ہیں وہی لوگ عام لوگوں کو دہشت گرد بنا کے مار رہے ہیں۔کشمور کا بچہ بچہ جانتا ہے کہ لعل بخش مزاری کو کشمور کے موبائل مارکیٹ سے اٹھایا گیا ہے۔کون انصاف کرے گا لعل بخش مزاری کے ساتھ

جب کہ بخشاپور پولیس کا کہنا ہے کہ خفیہ اطلاع پر سومر لاڑو کے کچے کی طرف جاتے ہوئے لنک روڈ پر مبینہ پولیس مقابل

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں