56

سندھ حکومت کے لاک ڈاؤن کے اقدام کے خلاف وزیر اعظم بھی بول پڑے

اسلام آباد ( ویب ڈیسک ) سندھ حکومت کی جانب سے لاک ڈاؤن کے اقدام کے خلاف وزیر اعظم عمران خان بھی بول پڑے کہا کہ سندھ حکومت سے بس اتنا کہوں گا کہ لاک ڈاؤن کا مطلب لوگوں کو بھوکا رکھنا ہے ، ہم کبھی لاک ڈاؤن نہیں کریں گے ۔آپ کا وزیر اعظم آپ کے ساتھ کے تحت عوام سے براہ راست گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ کورونا وائرس سے بچنے کا واحد طریقہ ویکسی نیشن کو قرار دیتے ہوئے کہا کہ عوام احتیاطی تدابیر اپنائیں ،ویکسی نیشن کے بغیر سکول نہ کھولے جائیں ، کورونا سے بچنے کیلئے سب سے بڑی احتیاطی تدبیر ویکسی نیشن کےبعد ماسک کا استعمال ہے ۔پاکستان میں کورونا کی چوتھی لہر پھیل رہی ہے ، بھارتی ڈیلٹا ویرینٹ سب سے خطرناک قسم ہے جو تیزی سے پھیل رہی ہے مگر ہم نے سخت اقدامات اٹھائے اور اپنی معیشت کو بھی بچائے رکھا ، عوام کی جانب سے تعاون پر شکر گزار بھی ہوں ۔وزیر اعظم نے کہا کہ ہم نے سخت اقدامات اٹھانے کے باوجود لاک ڈاؤن نہیں کیا ، ہمارے ہمسایہ ملک بھارت نے بغیر سوچے سمجھے لاک ڈاؤن کا اقدام اٹھایا جس سے بھارت میں تباہی آگئی ، بھارت نے صرف ایلیٹ طبقے کا سوچا، انہوں نے یہ نہیں دیکھا کہ لاک ڈاؤن سے دیہاڑی دار طبقے کا کیا بنے گا، بہت سے لوگ دیگر دیہات سے شہروں میں روزگار کیلئے آئے ہیں لاک ڈاؤن سے وہ محصور ہو جاتے ہیں ۔ہماری معیشت بڑی مشکل کے بعد سنبھلی ہے ، اب لاک ڈاؤن کر کے دوبارہ معیشت کو خراب نہیں کر سکتے ۔ سپورٹس سپورٹس سے متعلق بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ میں نے وہ دور دیکھا ہے جب کھیلوں کا عروج تھا ، ہاکی ، سکواش میں عروج حاصل تھا ، ہمارے دور میں ہماری کرکٹ ٹیم نیچے سے آکر ورلڈ چیمپئن بن گئی مگر بد قستی سے دو خاندانوں نے ہر ادارے کا بیڑہ غرق کر دیا ، ہر ادارے کا سربراہ اپنا بندہ بنا دیا ، جس سے کھیلوں کا میدان تباہ ہو گیا ۔جب تک گھاس پر ہاکی کھیلی جاتی تھی پاکستان چیمپئن تھا، جب آسٹرو سٹروف کا استعمال ہوا تو ہم اس پر شفٹ نہیں ہوئے، نتیجہ یہ ہے کہ ہم اولمپکس میں کوالیفائی نہیں کر پائے ۔ ہمارے ملک میں اب میدان ختم ہو رہے ہیں ، میدان نہیں ہوں گے تو بچےکھیلیں گے کیسے اور ٹیلنٹ کیسے سامنے آئے گا۔ماضی میں کھیلوں پر توجہ نہیں دے سکا مگر اب بھرپور توجہ دوں گا۔ نور مقدم کیس ایک لائیو کالر نے نور مقدم کیس پر بات کی ، وزیر اعظم نے کہا کہ میں صرف اتنا یقین دلاتا ہوں کہ کوئی شخص طاقت یا امریکی شہریت کے نام پر اس کیس سے بچ نہیں پائے گا، جیسے افغان سفیر کی بیٹی کے کیس میں پولیس نے ایک ایک لمحے کی حرکت کو ٹریس کیا کہ سلسلہ کب گھر سے نکلی ، کس ٹیکسی میں بیٹھی ، کون ڈرائیور لے کر گیا ، کہاں کہاں گئی ، پولیس نے ایک ایک شخص کو پکڑ کر معاملہ واضح کر دیا اسی طرح نور مقدم کیس کی ایک ایک چیز کو دیکھا جا رہا ہے اور میں ذاتی طور پر معاملے کو مانیٹر کر رہا ہوں ۔ کوئی سزا سے بچ نہیں پائے گا۔ ماحولیات ماحولیات پر گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ میں سب سے درخواست کروں گا کہ ہر شخص ایک ایک درخت ضرور لگائے ، میٹرو اور اورنج ٹرین بنانا کوئی بڑی بات نہیں ، آپ کے پاس پیسے ہوں ، آپ چار سال تک اشتہار دکھاتے رہیں ، پیسے دیں اور میٹرو یا اورنج بنا لیں ، لیکن لانگ ٹرم پلانگ کیلئے درخت لگائیں اور ماحولیات کو بچائیں۔ دھاندلی کے الزامات پر جواب دھاندلی کے الزامات پر بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ میں جب کرکٹ کھیلتا تھا تو ہر ملک کا اپنا امپائر ہوتا تھا ، ہندوستان کبھی پاکستان میں نہیں جیتا تھا ، پاکستان کبھی ہندوستان میں نہیں جیتا تھا ، مجھے فخر ہے کہ ہم نے ایک مہم چلائی کہ نیوٹرل امپائر لائیں ، میں نے وہ مہم لیڈ کی تھی ۔ پاکستان وہ پہلا ملک ہے جو میچ کیلئے نیوٹرل امپائر لایا ، یہی حال یہاں سیاست کا ہے ہارنے والا کہتا ہے دھاندلی ہوئی ہے ۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ہم حکومت میں بیٹھے ہیں ، ہم الیکشن جیت سکتے ہیں مگر ہم کوشش اور محنت کر کے الیکشن کا سسٹم ٹھیک کر رہے ہیں ، ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ الیکٹرانک ووٹنگ مشین لے کر آئیں ، الیکٹرانک ووٹنگ مشین سے الیکشن ختم ہوتے ہی رزلٹ آجائے ، ایک سال سے اپوزیشن سے کہہ رہے ہیں کہ انتخابی اصلاحات کریں مگر اپوزیشن نہ ہماری بات مانتی ہے نہ ہی ہمیں تجاویز دیتی ہیں ۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان میں تو نگران حکومت ہوتی ہے مگر آزاد کشمیر میں تو وزیر اعظم کی زیر نگرانی انتخابات ہوتے ہیں ، آزاد کشمیر میں تو ساری مشینری وہاں کے وزیر اعظم نے لگائی تھی ، پولیس ان کی تھی ، الیکشن کمیشن کا سینئر اہلکار وزیر اعظم آزاد کشمیر کا ہم زلف ہے ، پھر وہاں پر شور کر رہے ہیں کہ دھاندلی ہوئی ہے ۔ منی لانڈرنگ، کرپشن منی لانڈرنگ پر بات کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ منی لانڈرنگ سے کرپٹ حکمران غریب ملکوں سے پیسہ چوری کر کے امیر ملکوں میں لے جاتے ہیں جس کے باعث امیر ملک امیر سے امیر تر جبکہ غریب ملک غریب سے غریب تر ہو جاتا ہے ۔ انگریز کے ہندوستان آنے سے قبل برصغیر دنیا کی جی ڈی پی کا 34 فیصد حصہ ڈال رہا تھا مگر دو سو سال کے بعد جب انگریز یہاں سے گیا تو بر صغیر کا حصہ صرف تین فیصد رہ گیا ۔ پاکستان سے منی لانڈرنگ ہوتی ہے پیسے کا ڈالر خرید کر باہر بھیجا جاتا ہے جس کے باعث ڈالر کی قیمت اوپر بڑھتی ہے اور پیسے پر دباؤ آجاتا ہے ۔ وزیر اعظم نے کہا کہ کرپشن میں انہوں نے اداروں پر دباؤ ڈالا ، سیاسی مقاصد کیلئے اداروں میں غیر ضروری بھرتیاں کی گئیں اور پھر انہیں مستقل کیا گیا جس سے ادارے تباہ ہوئے ،و زیر اعظم نے پی ٹی وی ، پی آئی اے اور سٹیل ملز کی حالت کا خصوصی ذکر کیا۔ گاڑیوں کی قیمتیں کم نہ ہونے پر نوٹس ایک کالر کی جانب سے نکتہ اٹھایا گیا کہ گاڑیوں کے ٹیکسز میں کمی کے باوجود گاڑیاں سستی نہیں ہوئیں جس پر وزیر اعظم نے کہا کہ میں فوری اس کو چیک کروں گا کہ ایسا کیوں نہیں ہوا ۔ اور جو اون قیمتوں کا معاملہ ہے وہ یہ ہے کہ گاڑیوں کی طلب بڑھ گئی ہے جس کے باعث فوری گاڑی دینے پر اضافی قیمت ادا کرنا چاہ رہی ہے ، وزیر اعظم نے اس معاملے پر فوری حماد اظہر سے وضاحت مانگی ، حماد اظہر نے فوری وزیر اعظم کو بتایا کہ یہ ایک بلیک کا طریقہ ہے اس پر ایکشن لیا جا رہا ہے ، یہ جلد ہی بہتر ہو جائے گا ، گاڑیاں بنانے والی صنعتیں پوری استعداد سے کام کر رہی ہیں جلد ہی طلب اور رسد میں توازن آجائے گا۔ اوور سیز پاکستانی وزیر اعظم نے ایک بار پھر اوور سیز پاکستانیوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ہماراکرنٹ اکاؤنٹ خسارہ اس قدر زیادہ تھا کہ ہمارے لئے اتارنا بہت مشکل تھا ایسے میں اوور سیز پاکستانیوں نے ہماری بہت مدد کی ان کی جانب سے آئے زرمبادلہ نے بہت آسانیاں کیں ۔ ہم کوشش کر رہے ہیں کہ ایسا نظام لائیں کہ اوور سیز پاکستانی آسانی سے پیسے ملک کے اندر لا سکیں اور بوقت ضرورت باہر بھی لے جائیں۔ ریاست مدینہ ایک خاتون کالر کی جانب سے ریاست مدینہ سے متعلق سوال پر وزیر اعظم نے کہا کہ ہم ہر نماز میں دعا کرتے ہیں کہ اے اللہ ہمیں اس راستے پر چلا ، وہی کامیابی کا راستہ ہے ، کیا ہم بطور قوم اس راستے پر چل رہے ہیں ، پاکستان کبھی اس راستے پر چل رہا تھا جو ایک فلاحی ریاست کا راستہ تھا ، اب ہماری حکومت فلاحی راست کی جانب جا رہی ہے ، ہم ہیلتھ کارڈ دے رہے ہیں ،خیبرپختونخوا میں ایک خاندان دس لاکھ روپے تک علاج کرا سکتا ہے ، ہم شہروں میں آنے والے مزدور طبقوں کیلئے پناہ گناہیں بڑھا رہے ہیں تاکہ مزدور محنت مزدوری کے بعد رات کو کھانا کھائے اور سوئے تو اس کے پیسے بچتے ہیں ، اس طرح وہ اپنی مزدوری اپنے گھر والوں کو بھیج سکتا ہے ۔ ہم اب 11 مزید پناہ گاہیں بنا رہے ہیں ۔ وزیر اعظم نے کہا کہ فلاحی راست کی جانب ایک اور قدم کوئی بھوکا نہ سوئے اٹھا رہے ہیں ، فی الحال یہ چار شہروں میں بارہ بسیں چل رہی ہیں ، ہماری کوشش ہے کہ اگلے چھ ماہ میں ہم پچاس ٹرک چلائیں ۔ کامیاب پاکستان میرا سب سے بڑا پروگرام آنے والا ہے ۔ ہمارے چالیس فیصد گھرانے جو غربت کی سطح سے نیچے ہیں ان کے ایک بندے کو فنی تعلیم دیں گے ، ایک بندے کو قرض دیں گے کہ وہ اپنا گھر بنا سکیں، اس طرح وہ کرایے کی بجائے اپنا گھر بنا کر اس کی قسطیں دیں گے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ قانون کی بالا دستی لاگو کریں گے ، طاقت کی بالا دستی کو قانون کی بالا دستی میں لائیں گے اس کیلئے مجھے اپنی قوم کی سپورٹ کی ضرورت ہے ، ہمیں لوگوں کو قانون اور انصاف دے کر آزاد کرنا ہے ، یہ وہی لوگ ہیں جن پر ہاتھ ڈالیں تو مجھے حکومت گرانے کی دھمکی دیتی ہیں ان سب کو قانون کی بالا دستی میں لانا ہے ۔ وزیر اعظم نے کہا کہ خود داری پر بھی کام کرنا ہے ، ہمیں ایک خود دار قوم بننا ہے ، میں چاہتا ہوں کہ ہمیں قرضے نہ لینے پڑیں اور دنیا میں سبز پاسپورٹ کی عزت ہو۔ وزیر اعظم نے تجارتی و اقتصادی شعبہ سے متعلقہ تحقیقی و تجزیاتی ادارے گوبینکنگ ریٹس کمپنی کی رپورٹ دکھاتے ہوئے کہا کہ کمپنی نے پاکستان کو رہن سہن کے اعتبار سے دنیا کا سبب سے سستا ترین ملک قرار دیا ہے ۔ ہم نے اس سال ملکی تاریخ کا سب سے زیادہ ٹیکس اکٹھا کیا ہے ، ایف بی آر میں اصلاحات کر کے مزید ٹیکس اکٹھا کر رہے ہیں جو عوام کی فلاح و بہبود کیلئے استعمال ہو گا۔ عمران خان نے کہا کہ عالمی سطح پر پٹرول کی قیمتوں میں 47 فیصد اضافہ ہوا ہے جبکہ پاکستان میں صرف 11 فیصد اضافہ کیا گیا ،ادراک ہے کہ یہ تنخواہ دار طبقے کیلئے مشکل وقت ہے ، انڈسٹری مالکان ورکرز کی تنخواہیں برھائیں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں