86

بجلی کا بل اور پاکستانی عوام

محترم قارئین!
آج آپ سب سےایک بہت ہی اہم بات شیئر کرنا چاہتی ہوں۔آج کا موضوع میرا کچھ اور تھا لیکن اچانک میری نظر بجلی کے بل پر پڑی ۔ہرماہ بجلی کا جو بل آتا ہے سب کو ہلا کے رکھ دیتا ہے لیکن اس بار میرےدل میں خیال آیاکہ کب تک چپ کر کے ہزاروں لاکھوں کے بل ہم بھریں گے ہمیں آواز اُٹھانی ہوگی اپنی چپ کو توڑنا ہو گا۔
برائی برے لوگوں کے برا کرنے سے نہیں بلکہ اچھے لوگوں کے چپ رہنے سے بڑھتی ہے۔
بجلی کے ہزاروں کے بل کی تلوار سر پے لٹک رہی ہوتی ہے اور غریب لوگوں کا 2وقت کا کھانا تک چھین لیتی ہے یہ بجلی کے بل کی لٹکتی ہوئی تلوار۔ہر مہینے کے پہلے دس دن بجلی کے بل کے لیےقرضےلینے اور پیسے اکھٹے کرنے کی تگ ودومیں ایک انسان کو یہاں تک لے آتی ہے یا تو وہ غلط طریقے سے پیسے کمانے کی کوشش کرتا ہےیا پھر اپنی جان دینے کی سوچتاہے۔
کیا اب ایسا ہی رہ گیا ہےکہ اپنے پاک سر زمین پر خودکشی جیسی حرام موت کرنے پے لوگ مجبور ہو جائیں باپ اپنی بیٹیاں تک بیچ رہے ہیں ان بل کی ادائیگیوں کے لیے۔میری گزارش ہے نئی حکومت سےکہ اک نظر کرم ہم غریبوں پر بھی کرے جو ہر ماہ ان بجلی کے بلوں سے نکلتے نہیں اور اس سے آگے کا کیا سوچیں اس ملک میں مفلوج ہو کے رہ گے اس ملک کے غریب لوگ کوئی پرسانِ حال نہیں خدارا بجلی کے بل کم کیے جائیں تاکہ ہم جیسے غریب سکھ کا سانس لیں سکیں تا کہ اپنے ہی وطن میں ہم بھی خوشی سے جیں اس قدر مجبور نہ کیا جائے کے ایک دن ہم بھی کوئی جرم نہ کر بیٹھیں۔

Print Friendly, PDF & Email

تبصرہ کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں